Traduci pagina

English French German Italian Portuguese Russian Spanish

Pakistan

Work on Swat Motorway Phase II inaugurated

Chitral Today - Ven, 20/05/2022 - 6:28pm
SWAT: Chief Minister Mahmood Khan on Friday paid a daylong visit to Swat where he performed the groundbreaking of Swat Motorway Phase-II.

The 80-km-long Swat Motorway Phase-II would be constructed under Public Private Partnership from Chakdarra Interchange to Fatehpur at a total estimated cost of Rs58 billion.

The chief minister on the occasion also laid the foundation stone of Swat University of Engineering and Applied Sciences Barikot campus which would be completed at an estimated cost of Rs1.7 billion. Moreover, he inaugurated newly-constructed building of Tehsil Headquarters Hospital Barikot and performed the groundbreaking of Bab-e-Odhyana and Tehsil Playground at Shamozai.

Addressing a public gathering at Barikot, the chief minister felicitated the people of Swat on the formal groundbreaking of Swat Motorway Phase-II and said the project would prove to be a milestone towards sustainable development of entire region.

The chief minister said that after Swat Motorway Phase II, groundbreaking of Dir Motorway and Peshawar-DI Khan Motorway would also be performed.

He remarked that the projects initiated by his government for the development of the region would be remembered in the history adding that importance and usefulness of such projects would be realized in near future.

The chief minister said that after health card scheme, Insaf Food Card Scheme was being launched to support vulnerable segments of society and provide them relief in purchasing essential commodities. He added that an education card would also be launched from next financial year which aimed to provide financial assistance to deserving and talented students.

The post Work on Swat Motorway Phase II inaugurated appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Summer vacations in educational institutions announced

Chitral Today - Ven, 20/05/2022 - 6:17pm
By Muhammad Irshadullah  PESHAWAR: The government here on Friday announced summer vacations for educational institutes in the summer and winter zones. As per a notification, the summer vacations in educational institutions will be from June to 14 August in plain areas and from July 1 to July 31 in hilly areas. Annual results of grade 1 to 8th will be announced on May 31 in the plain areas while the results will be released on June 30 in the hilly areas. New admission campaign will be launched in August in plain areas in which teachers must attend the admission campaign from July 20 up to the winter areas possible.

The post Summer vacations in educational institutions announced appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Anti-polio drive launched

Chitral Today - Ven, 20/05/2022 - 7:56am
BOONI: Government and health officials on Thursday formally launched an anti-polio drive by administering drops to children at the headquarters hospital Booni. 

The campaign will start on May 23 and continue till May 27 during which children under the age of five years will be administered polio drops.

Chitral remains free from polio for over 30 years but Pakistan and Afghanistan are still trying to attain the status of polio-free countries.

Three cases have so far have been reported in the erstwhile tribal areas of Pakistan this year. The first case emerged after a gap of 15 months in North Waziristan.

The post Anti-polio drive launched appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Chitral miners convey concerns to govt official

Chitral Today - Ven, 20/05/2022 - 7:42am

PESHAWAR: Chitral Mines and Minerals Association and the Federation of Pakistan Chambers of Commerce Peshawar have informed the director general Mines and Minerals about concerns regarding lease and other business issues in Chitral and demanded that action be taken in this regard.

A briefing on the policy should be given to help alleviate the concerns and anxieties of the business community. In the current block policy, if any rights have been violated and anyone found guilty of departmental negligence, action will definitely be taken against them.

In this regard, an important meeting was held at the office of DG Mines and Minerals where businessmen from Chitral led by Coordinator Sartaj Ahmed Khan and former provincial minister Saleem Khan met DG Mines and Minerals Muhammad Naeem Khan.F

Saleem Khan said protection of rights of local people should be ensured in Chitral as in other districts of the province as it is their basic right. Is. In the current situation, the people of Chitral are very dissatisfied with some of the policies.

Sartaj Ahmad Khan said the people of Chitral are very peaceful and hardworking but the current policy regarding leases and blocks has caused them great concern and difficulties. He said that it would be better if a comprehensive briefing was given by the department on the current policy regarding leases and blocks to guide the relevant business community of Chitral so that they could sit together and discuss to ensure that their concerns and concerns were allayed. can go.

The DG Mines and Mineral after hearing all the complaints from FPCCI clarified that with regard to leases or blocks in Chitral if the rights of the locals have been violated and nepotism has taken place then action will be taken against anyone found involved in this.

He said that he was ready to give a comprehensive briefing on the current policy regarding leases and blocks and all the concerns of the business community would be addressed in collaboration with FPCCI.

 

The post Chitral miners convey concerns to govt official appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Madressa student found dead

Chitral Today - Gio, 19/05/2022 - 5:56pm
AYUN: A 10-year-old boy was found dead and hanging from a swing in the Thoriandeh locality of Ayun, police said on Thursday.

The Ayun police said Jibran Hussain, son of Akbar Hussain, a madressa student, left for his institution on Wednesday and was later found dead at a swing located on the premises of his house.

A rope was found entangled around the boy’s neck that caused his death.  The police said the family of the boy did not suspect any foul play and hence no postmortem was conducted on the body.

The post Madressa student found dead appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Dr Tariqullah wins award for pioneering, impactful work

Chitral Today - Gio, 19/05/2022 - 5:10pm
Prof. Dr Tariqullah Khan from Morder Upper Chitral is among three renowned international professors declared as winners of the 2022 Islamic Development Bank (IsDB) Prize for Impactful Achievement in Islamic Economics for their significant and influential contributions in the field of Islamic economics and finance.

The winners – Prof. Habib Ahmed (first prize), Prof. Mansur Masih (second prize), and Prof. Tariqullah Khan (third prize) – are internationally recognized academics who produced pioneering and impactful scholarly works.

Prof. Habib Ahmed, the Sharjah Chair in Islamic Law and Finance at Durham University, Durham, U.K., was selected for the first prize in recognition of his pioneering and innovative work in Islamic economics and finance that pushed forward knowledge and influenced policymaking for the use of Islamic finance in socio-economic development.

Prof. Mansur Masih, a Senior Professor at Universiti Kuala Lumpur Business School, Malaysia, won the second prize for his original and pioneering contributions to econometric applications of Islamic finance.

Prof. Tariqullah Khan, a professor at the Faculty of Business and Management Sciences, Istanbul Zaim University, Turkey, won the third prize in recognition of his work to integrate Islamic economics and finance with sustainable development and circular economy.

About the award, Dr Tariqullah in a social media post said: “Islamic Development Bank (IsDB) Islamic Development Bank Institute (IsDBI) thank you for recognizing my humble work over the last 3 years in integrating sustainability management in Islamic economics and finance through circular and regenarative models. In such a short time, recognition of the humble work shows the importance of sustainability management as the pivot for Islamic economics and finance.”

The post Dr Tariqullah wins award for pioneering, impactful work appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

آئیندہ انتخابات

Chitral Today - Gio, 19/05/2022 - 4:48pm
داد بیداد

ڈاکٹرعنایت اللہ فیضی
مقبوضہ کشمیر میں آئیندہ انتخابات کے لئے نئی حلقہ بندیوں کا اہتمام کر کے بھا رت کے ملحقہ دیہات سے ہندو آبادی کو کشمیر میں شامل کیا جارہا ہے اس سلسلے میں کشمیر کے مسلمان احتجاج کر رہے ہیں مگر سنتا کوئی نہیں پا کستان کے دفتر خارجہ نے اقوام متحدہ کی انسا نی حقوق کمیٹی کے سامنے یہ مسئلہ اٹھایا ہے اسلامی ملکوں کی کا نفرنس نے اس پر بھر پور احتجاج کیا ہے آزاد کشمیر کی حکومت نے بھی اس ظلم اور زیادتی کے خلاف اقوام متحدہ کے سکرٹری جنرل کو ایک مراسلہ ارسال کیا ہے لیکن کسی کے کانوں پر جوں نہیں رینگتی نوابزادہ نصر اللہ خان مرحوم کا ایک سکہ بند شعر ہے 

کب اشک بہانے سے کٹی ہے شب ہجران
کب کوئی بلا صرف دعاووں سے ٹلی ہے

مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی قابض فوج جو بھی ضلم ڈھا تی ہے اس کا مقا بلہ احتجاج، مراسلات، اور فریاد سے نہیں ہو تا اس کا مقا بلہ صرف گولی کا جواب گولی اور ظلم کا جواب ظلم سے ہو سکتا ہے اور کشمیری عوام کو گذشتہ 76سالوں میں اس کا تجربہ ہو چکا ہے آزادی سے پہلے مئی 1947ء میں قابض ڈوگرہ فوج نے سرینگر، اننت نا گ اور جمو ں کے اندر 5ہزار مسلما ن مردوں، خواتین اور بچوں کو مو ت کے گھا ٹ اتارا جرم یہ تھا کہ پا کستان بننے سے پہلے مسلمان پا کستان کو اپنی منزل قرار دے کر گھروں سے باہر نکل آئے تھے ایک سال بعد کشمیر یوں نے ہتھیار اُٹھایا تو مظفر اباد، پلندری، کوٹلی اور دیگر علا قوں پر مشتمل 13297مر بع کلو میٹر کا وسیع علا قہ قابض ڈوگرہ اور حملہ آور بھارتی فوج سے آزاد کرا لیا گیا

اس وقت آزاد کشمیر کے 10اضلا ع میں آزاد حکومت قائم ہے کشمیر کا 55فیصد رقبہ بھارت کے قبضے میں ہے جبکہ 15فیصد رقبہ گلگت بلتستان کا آزاد علا قہ کہلا تا ہے لداخ، جموں ویلی اور کشمیر میں بھارت نے ساڑھے پا نچ لاکھ فوج اور دو لاکھ بھارتی پو لیس اتار ی ہوئی ہے عالمی برادری میں کشمیر ی مسلما نوں کی مدد کے لئے پا کستان نے شروع دن سے اپنا بھر پور کردار ادا کیا ہے پا کستان میں جب بھی سیا سی عدم استحکام آیا شورش ہوئی اور افرا تفری پیدا ہوئی بھارت نے مو قع سے فائدہ اٹھا کر کوئی نہ کوئی ظا لما نہ قدم اُٹھایا 1984ء کی شورش اور افرا تفری میں قا بض فو ج نے سیا چن گلیشر کے ایک حصے پر چو کیاں قائم کیں جہاں پا کستانی فوج دنیا کے بلند ترین محا ذ جنگ پر برفا نی ہوا ووں کا مقا بلہ کر تی ہوئی دشمن کے خلا ف جنگ لڑر ہی

اس جنگ کو 38سال ہورہے ہیں محاذ جنگ پر زمین، پہاڑ، چشمے اور ندی نالے نہیں ہیں برف ہی برف اور گلیشر ہی گلیشر ہے اور اس کا رقبہ 700مربع کلو میٹر ہے سطح سمندر سے اس کی بلندی 5400میٹر یعنی 16000فٹ سے شروع ہو کر 27000فٹ یعنی 9ہزار میٹر تک جا تی ہے 24000فٹ تک دونوں طرف کی فو جی چو کیاں قائم ہیں جہاں جوان اگلو کے اندر رہتے ہیں کشمیر اقوام متحدہ کے ایجنڈے پر 74سالوں سے حل طلب مسئلہ ہے اقوام متحدہ کی قرار داد وں میں کشمیر کے اندر استصواب رائے کی تجویز دی گئی ہے، عوام کی رائے لی جا ئے وہ بھارت کے قبضے میں رہنا چاہتے ہیں یا آزادی کیساتھ پا کستان سے ملنا چا ہتے ہیں اور حقیقت یہ ہے کہ کشمیر کی 75فیصد مسلما ن آبادی آزادہو کر پا کستان سے ملنا چاہتی ہے اب تک رائے شما ری نہیں ہوئی 5اگست 2019کو بھارت نے بھارتی دستور کی دو دفعات کو کالعدم قرار دیا جنکے تحت کشمیر کو بھارت سے الگ آزاد علا قہ تسلیم کیا گیا تھا اور بھارتی ہندو وں کو کشمیر میں زمین خرید نے کی اجا زت نہیں تھی اس سال حلقہ بندیوں کے بہانے بھارتی ہندووں کی آبادی کو کشمیر میں شا مل کر کے گویا مقبوضہ کشمیر کو ہندو اکثریت کے علا قے میں تبدیل کیا جا رہا ہے اقوام متحدہ کو ضرور اس کا نو ٹس لینا چاہئیے۔

The post آئیندہ انتخابات appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

کالاش روایات کو زندہ رکھنے میں خواتین کا کردار

Chitral Today - Gio, 19/05/2022 - 1:42pm

سید نذیر حسین شاہ نذیر 

کالاش کا مطلب ہے کالے کپڑے پہننے والیاں اور والے۔ یہی وہ رنگ اور لباس ہے جو دنیا کے اس قدیم ترین مذہب اور تہذیب کواب تک زندہ رکھا ہوا ہے۔

 کالاش مرد عام روایتی قمیض شلوار میں ملبوس ہوتے ہیں مگر ان کے برعکس کالاش عورتیں کالے رنگ برنگے کڑھائیوں، موتیوں کی لڑیوں ، دیدہ زیب اشیاءجیسےسپیوں، گھونگوں، بٹنوں، سکوں، مختلف دھاتوں سےبنے زیورات سے مزین لمبے سیاہ ڈھیلے ڈھالے چغہ نما کپڑے پہنتی ہیں۔ یہ وہی چیزیں ہیں جودنیا کے اس قدیم ترین مذہب اور تہذیب کو اب تک ہزاروں سال گزرنے کے با وجود زندہ رکھے ہوئے ہیں جس کو آہستہ ٓاہستہ معدومیت کے چیلنج کا سامنا ہے۔ 

ابھی کچھ دن ہوئے سہ روزہ چلم جوشٹ تہوار اختتام پذیر ہو ا ہے جس میں سینکڑوں کی تعداد میں ملکی اور غیر ملکی سیاح کالاش قبیلے کے بہار کو خوش ٓامدید کہنے والے فیسٹیول میں کالاش تہذیب کی ہمہ گیری سے محظوظ ہونے آئے۔ ایسے تہواروں میں کالاش عورتوں کے یہ دیدہ زیب کالی پوشاک ہی ہے جو کالاش عورتوں کو ان کی مذہبی اور ثقافتی تہواروں میں دیکھنے والوں کے لیے محورو مرکز بنا دیتی ہے۔ ان کے سر پر ایک دیدہ زیب ہاتھ سے بنی ٹوپی بھی ہوتی ہے جو پیچھے کمر سے سر تک آتی ہے۔ جبکہ کالاش مرد پاکستانی عوامی لباس جو کہ قمیض شلوار ہے، اس میں ملبوس ہوتے ہیں۔ اس کے ساتھ مردچترالی ٹوپی اور گلے میں بیلٹ جیسی دھاری دار مختلف رنگوں اور ڈیزائینز کی مدد سے تیارپٹی کندھوں پر ڈالتے ہیں جس میں رنگ برنگے دھاگوں کا باریک خوش نما کام کیا گیا ہوتا ہے مردوں کے لباس درزی تیار کرتے ہیں لیکن خواتین کی ہاتھ سے تیا ر پوشاک کا مختلف طریقہء کار ہے۔ جس میں کم از کم ایک ماہ خرچ ہوتا ہے اور ُاونی اور سوتی کپڑا استعمال ہوتا ہے۔ 

کالج کی کلاس کی طالبہ الوینہ نے ڈیلی چترال سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ہماراکلچر دنیا کی قدیم ترین ثقافت ہے اور اس کا اظہار ہم مختلف تہواروں کے مواقع پر اپنے مذہبی و روحانی گیت گا کر اور رقص سے کرتے ہیں مگر یہ تکلیف دہ ہے کہ کچھ سوشل میڈیا کے لوگ ہمارے تشخص کو بری طرح سے مجروح کرنے کی کوشش کرتے ہرتے ہیں جو کہ قابل مذمت فعل ہے۔”جو لوگ یہاں ہمارے مذہبی تہواروں کے مواقع پر آتے ہیں ہم ان کی عزت کرتے ہیں کیونکہ وہ ہمارے مہمان ہے لیکن باہر سے آنے والے ہماری مذہبی روایات میں مداخلت کرتے ہیں اور ہمیں اپنے عقائد کا اظہار کھل کے کرنے نہیں دیتے ۔ انہوں نے بتایا کہ ہماری تہواروں کے مواقع پر باہر سے آنے والوں کی وجہ سے ہماری ثقافت کو سب سے زیادہ نقصان پہنچنے کا خدشہ لاحق ہے،” الوینہ نے بتایا۔ 

الوینہ نے کالاش خواتین کے لباس و پوشاک کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ کالاش خواتین کے لباس میں قمیض پر کل آٹھ گز کپڑا استعمال ہوتا ہے ۔ زمانہ قدیم میں لوگ بھیڑ کے اون سے یہ روایتی کپڑے تیار کرتے تھے مگر اب دور جدید میں بازار سے کپڑے خرید کر یہاں کی مقامی خواتین اپنے ہاتھوں سے ان میں کشیدہ کاری اور ڈیزائنگ کرتی ہیں۔ ایک اندازے کے مطابق ایک قمیض کو تیار ہونے میں کم و بیش دس سے بارہ دن لگتے ہیں۔ ایک لباس پر دس سے تیس ہزار روپے کے اخراجات آتے ہیں۔

شاہی گل نامی کالاش خاتون نے بتایاکہ گزشتہ بیس سالوں سے وہ وادی بمبوریت میں دستکاری کر رہی ہیں اور اس سلسلے میں ان کا اپنا سنٹر اور کاروباری مرکز موجود ہے۔ ان کا کہنا تھاکہ ” میں گزشتہ بیس سالوں سے کالاش دستکاری کو فروع دینے اور نئی نسل میں کالاش تہذیب کا ورثہ منتقل کرنے کے لیے کام کر رہی ہیں۔ ان کے سنٹر سے درجنوں خواتین روایتی کالاش دستکاری اور پوشاک سازی سیکھ چکی ہیں اور وہ نہ صرف اپنے لئے یہ لباس بناتی ہیں بلکہ وہ کاروبار بھی کر رہی ہیں۔ شاہی گل نے بتایا کہ ایک مکمل لباس کم از کم ایک ماہ کی مسلسل محنت سے تیار ہوتا ہے جس میں قمیض، ٹوپی، ناڑہ، زیورات، موتیوں کی مالا، شوشوت وغیرہ شامل ہوتے ہیں۔لباس کی آرائیش پر دس بارہ ہزار روپے کے میٹریل استعمال ہوتے ہیں”۔ 

پچیس سالہ کالاش خاتون جمال بی بی نے کالاشہ پوشاک کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ہمارا ثقافتی لباس بہت ہی منفرد ہے جو کہ عام بازاروں میں نہیں ملتی اس کی وجہ یہ ہے کہ اس روایتی پوشاک کو تیار کرنے میں بہت زیادہ مہارت اور وقت کی ضرورت ہوتی ہے ، ایک مکمل پوشاک کے تیار ہونے میں کم و بیش ایک ماہ کا عرصہ درکار ہوتا ہے اور ان میں ہونے والی ساری گلکاری ، کڑھائی سجاوٹ، زیبائش اور ڈیزائنگ وغیرہ یہاں کی مقامی خواتین اپنے ہاتھوں سے خود کرتی ہیں۔ 

جمال بی بی نے بتایا کہ کالاش دنیا کی قدیم ترین ثقافت ہے یہی وجہ ہے کہ اس ثقافت میں رنگا رنگی کو خاص اہمیت حاصل ہے، نہ صرف یہ کہان کی پوشاک رنگا رنگیوں سے بھر پور ہے بلکہ ان کی زندگی میں بھی تکثیریت کو ایک خاص مقام حاصل ہے۔ “ہم قدرت کے ہر موسم کے ساتھ روحانی تہوار منا کر اس کا بھر پور اظہار بھی کرتے ہیں۔ ہمارے ان تہواروں کا مقصد کوئی میلہ یا شعل و مستی ہر گز نہیں بلکہ یہ سارے تہوار ہمارے مذہبی رسوم و رواج ہے ان تہواروں میں ہم اپنے عقیدے کی مناسبت سے مناتے ہیں۔ جس میں گیت گا کر اوررقص کرکے ہم فطرت کی خوبصورتی اور خدا کی دی گئی نعمتوں کا شکرانہ ادا کرتے ہیں،” انہوں نے بتایا۔ 

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے علاقے چترال کی تین وادیوں ۔ بریر، بمبوریت اور بمبور میں کالاش کمیونٹی تقریباً چار ہزار نفوس پر مشتمل ہےجس کو مختلف چیلنجز کا سامنا ہے جن میں سر فہرست آبادی کا کم ہونا ہے۔ چودہ مئی سے سولہ مئی تک چترال کی تین وادیوں میں چلم جوشٹ تہوار منایا گیا۔

The post کالاش روایات کو زندہ رکھنے میں خواتین کا کردار appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

نقطئہ گداز کی تقریب رونمائی

Chitral Today - Gio, 19/05/2022 - 1:09pm

محکم الدین ایونی

کہتے ہیں کہ سادہ دل والے لوگ بادشاہ ہوتے ہیں۔ ان کے کام اللہ پاک بناتا اور سنوارتا ہے۔ بالکل اسی طرح جس طرح شیر بڑانگ خان گداز کی خواہش اور آرزو تھی ۔کہ اس کا شعری مجموعہ کسی نہ کسی طرح ان کی زندگی میں چھپ جائے۔ بس اس خواہش کی دیر تھی کہ صدر انجمن ترقی کھوار چترال شہزادہ تنویر الملک نے ان کا یہ شعری مجموعہ چھاپ کر گداز کو صاحب کتاب ہونے کا اعزاز بخشا۔ پھر اس کے بعد ان کی ایک اور خواہش ابھری کہ اس کتاب کی رونمائی شاندار طریقے سے ہو۔

خدا کا کرنا ایسا ہوا کہ یہ آرزو چترال پریس کلب کے صدر نے پوری کر دی اور ایسی شاندارتقریب رونمائی چترال پریس کلب کے زیر اہتمام منعقد ہوئی کہ نقط گداز کی رونمائی کو معدودے چند اہم رونمائی کتب میں شمار کیا جا سکتا ہے جس میں ادباء و شعرا ء اور کھوار زبان سے محبت رکھنے والوں کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔ شیر بڑانگ خان گداز نہایت منکسرالمزاج، محبت کے پیکر اور خاکسار شخصیت کے مالک ہیں ۔ قدرتی طور پر ان کی گفتگو، چال ڈھال سے احترام و ادب اور محبت کی چاشنی چھلکتی ہے۔

اس لئے صدر چترال پریس کلب ظہیرالدین نے کتاب کی رونمائی کی یہ تقریب اظہار محبت کے طور پر انجمن ترقی کھوار سے چھین لی۔ جس میں انجمن نے بھی بھر پور محبت کا اظہار کیا ۔ چترال پریس کلب میں شیر بڑانگ خان گدازکی کتاب “نقطہ گداز” کی تقریب رونمائی کے مہمان خصوصی چترال کے معروف نام وسکالر اور کالم نگار ڈاکٹر عنایت اللہ فیضی تھے۔ جبکہ صدارت کے فرائض انجمن ترقی کھوار کے سنئیر ترین رکن اقبال حیات نے انجام دی۔

صدر انجمن ترقی کھوار شہزادہ تنویر الملک، صدر چترال پریس کلب ظہیرالدین اور صاحب کتاب شیر بڑانگ خان گداز مہمانوں کے ساتھ تشریف فرماتھے۔ اقبال حیات نےتلاوت کی سعادت حاصل کی۔ شہزاد احمد شہزاد نے نعت شریف پیش کی اور راقم نے نظامت کے فرائض انجام دی۔ کتاب پر اردو اور کھوار ادب کے ممتاز محقق و نقاد اور معروف نام صالح ولی آزاد، عربی و اسلامی ادب کا عمیق مطالعہ کرنے والی شخصیت مولانا قاضی سلامت اللہ، ممتاز قانون دان و انجمن ترقی کھوار کے سابق صدر عبد الولی خان ایڈوکیٹ نے اپنے مقالے میں نقطہ گداز کو دور حاضر میں چترال میں چھپنے والا بہترین کتاب قراردیا اور کھوار زبان کی ترویج و حفاظت، معاشرتی ناہمواریوں کو اجاگرکرنے ، کھوار تہذیب و تمدن پر بیرونی زبان و ثقافت کی یلغار، نوجوان نسل کیلئےاہم پیغامات، شادی بیاہ کے منفی رسومات، قرآن و سنت سے دوری، قیام پاکستان کے مقاصد سے انحراف، وطن سے محبت جیسے موضوعات پر سیر حاصل شاعری کرنے پر صاحب کتاب شیربڑانگ گداز کو خراج عقیدت پیش کیا اور کہا کہ نظم کے قالب میں معاشرے میں پھیلنے والی منفی رجحانات کی جس خوبصورت انداز میں گداز نے نقشہ کھینچا ہے۔ اس کیلئے صاحب کتاب دادو تحسین کی مستحق ہے۔

انہوں نے شاعر کی ذاتی زندگی پر بھی تفصیل سے روشنی ڈالی اور کہا کہ شیر بڑانگ خان گداز ایسے شاعر ہیں۔ کہ انجان لوگ بھی اس کے چال ڈھال، نرم گفتاری، احترام و ادب، انکساری، اور خودی دیکھ کر پہچان جاتے ہیں۔کہ یہ شاعر ہے۔

مولانا نقیب اللہ رازی نے حسب عادت و روایت کتاب پر اپنی تنقید کےنشتر چلائے اور کتاب میں اغلاط کی نشاندہی کی جس پر مہمان خصوصی ڈاکٹر عنایت اللہ فیضی نے اپنے خطاب میں اس کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ اگر یہ خیال کیا جائے۔ کہ کتاب کو کسی بھی قسم کی غلطیوں سے پاک کرنے کیلئے ایڈٹ کمیٹی بننے چاہیے تھی تو یہ کمیٹی پاکستان کے پلاننگ ڈویژن کی طرح اصلاح کی آڑ میں اتنا وقت ضائع کرتی کہ یہ مجموعہ کتاب کی شکل میں چھپ کر منظر عام پر آنا ممکن نہ ہوتا۔ یوں یہ کتاب باروبار چھپ کر لوگوں کے ہاتھوں میں آچکی ہے۔

انہوں نے کہا کہ شیر بڑانگ خان گداز ایک عوامی اورخالص چترالی شاعر ہیں ۔ اس کی شاعری کااپنا اسلوب ہے۔ جسے لوگ پسند کرتے ہیں اور یہی ان کا معیار ہے۔ اس کیلئے کسی اور کے سرٹیفیکٹ کی ضرورت نہیں ہے ۔ صدر انجمن ترقی کھوار چترال شہزادہ تنویر الملک نے کہا کہ یہ انجمن کیلئے اعزاز کی بات ہے کہ گداز صاحب کا شعری مجموعہ چھپ چکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اصلاح کی گنجائش ہر کتاب میں رہتی ہے۔ کام ہو گا تو کمزوریاں سامنے آئیں گی جن کی اصلاح ہوتی رہے گی۔ انہوں صاحب کتاب شیر بڑانگ خان گدازکو بہترین شعری مجموعہ پیش کرنے پر مبارکباد دی۔

صدر پریس کلب ظہیر الدین نے نقطہ گداز پر طویل مقالہ پڑھا اور صاحب کتاب کی ذاتی زندگی پر روشنی ڈالنے کے ساتھ ساتھ بہترین شعر ی مجموعہ کتاب کی صورت میں منظر عام پر لانے پر ان کو اور صدر انجمن ترقی کھوار شہزادہ تنویرالملک کو خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ اس کتاب کی پریس کلب میں رونمائی ہمارے لئے اعزاز کی بات ہے ۔ صاحب کتاب شیر بڑانگ خان گداز نے اپنے خطاب میں کتاب کی اشاعت پر صدر انجمن ترقی کھوار شہزادہ تنویر الملک اور رونمائی کےپر وقار تقریب کے انعقاد پر صدر چترال پریس کلب ظہیرالدین کا شکریہ ادا کیا اور کہا۔lکہ دونوں اداروں کے بھر پور تعاون کے بغیر مجھ جیسے شاعر کیلئے کتاب کی چھپائی ممکن نہیں تھی اور یہ کام صرف اللہ پاک کی مہربانی اور ان اداروں کے بھر پور تعاون و مدد سے ممکن ہوا۔ اور میری دلی آرزو پوری ہوئی جس کیلئے میں اللہ کے حضور سب کیلئے دست بدعا ہوں۔

تقریب رونمائی کے موقع پر کھوار ادب کے ممتاز شخصیات محمد عرفان عرفان، چیرمین شوکت علی، عنایت اللہ اسیر، معز الدین بہرام صدر انجمن ترقی کھوار حلقہ چترال، مہربان الہی خنفی انجمن ترقی کھوار حلقہ پشاور ، افضل اللہ افضل، فداء الرحمن اور بڑی تعداد میں کھوار ادب سے محبت رکھنے والےمہمان موجود تھے۔

The post نقطئہ گداز کی تقریب رونمائی appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Malaysian bikers all praise for scenic beauty of Chitral

Chitral Today - Gio, 19/05/2022 - 7:43am
CHITRAL: The Malaysian bikers felt excited when they reached the scenic Booni valley and saw the natural beauty in Upper Chitral district on Wednesday.

The Malaysian tourists comprising 22 bikers arrived in Booni after enjoying the Chilimjusht or Chlim Joshi festival in Kalash valley and their first stay in Fizzagat in Swat valley in the first leg of their tour.

The local residents accorded warm welcome to the tourists upon their arrival to Booni. They later also watched a polo match at the polo ground in Booni.

The Khyber Pakhtunkhwa Culture and Tourism Authority (KPCTA) in collaboration with Saiyah Travels and Malaysian Ipoh Bikers Club has arranged the tour for the foreign motorcyclists.

The rally is aimed at showing the scenic places to the foreign tourists and promoting adventure tourism activities in Khyber Pakhtunkhwa.

The bikers would cover a total of 1950 kilometers distance after passing through the Hindu Kush, Karakoram and Himalaya mountain ranges. The tourists would visit scenic spots and stay at various tourist destinations in Khyber Pakhtunkhwa.

Earlier, the Malaysian bikers reached Lower Chitral via Lower Dir, Upper Dir and Lowari Top. They visited Garam Chashma, Qaqlasht meadows as well.

The tourists would now leave for Shandur Pass and would stay there for some time. The bikers would then proceed to Hindurab, Phandar and Gilgit-Baltistan.

“Pakistan, particularly the tourist spots in Khyber Pakhtunkhwa are really beautiful and the people are very hospitable and friendly,” said Resorizi bin Abdul Majeed, who is leader of the Malaysian Ipoh Bikers Club. He said that local people warmly welcomed them upon their arrival at various places during the rally.

“These are unforgettable moments for me,” added the Malaysian tourist.

Malaysian biker Azlan bin Muhammad Saeed said that they fully enjoyed the tour and were honoured by the generosity and hospitality of people.

“The scenic places and heritage sites are unique and eye-catching,” he said upon his arrival at Booni.

Azlan said he felt safe and secure and advised other foreigners to visit Pakistan to enjoy the beauty of nature and hospitality of people.

The bikers also praised the local and traditional cuisines and enjoyed visiting the marvelous tourist and heritage sites in Khyber Pakhtunkhwa.

They lauded the KPCTA and Saiyah Travels for arranging such a joyful tour for them.

The organizers said concerted efforts were being made to attract more domestic and international tourists to the province.

He said the efforts were yielding positive results as more groups of foreign tourists were arriving to visit the scenic sites in the KP. 

 

Source

The post Malaysian bikers all praise for scenic beauty of Chitral appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

دس سالہ بچہ جھولا جھولتے ہوئے جان بحق

Chitral Today - Gio, 19/05/2022 - 6:47am

چترال (محکم الدین) ایون کے گاوں تھوڑیاندہ میں دس سالہ بچہ جھولا جھولتے ہوئے رسی گلے میں پھندہ بن جانے کے نتیجے میں جان بحق ہوا ہے۔

ایون پولیس کے مطابق گذشتہ روز دس سالہ بچہ جبران حسین ولد اکبر حسین مدرسہ جانے کیلئے گھر سے نکلا اور گھر کے احاطے میں موجود جھولے میں مبینہ طور پر رسی پھندے کی شکل میں بچے کے گلے میں لپٹا پایاگیا جس کی مبینہ طور پر دم گھٹنے کے نتیجے میں موت واقع ہوئی تھی۔

پولیس کے مطابق یہ ایک حادثاتی واقعہ تھا۔ والدین نے کسی پر دعویداری نہیں کی۔ اس لئے پوسٹ ماٹم کی ضرورت محسوس نہیں کی گئی ۔ بچے کو بعد آزان سپرد خاک کیا گیا ۔

The post دس سالہ بچہ جھولا جھولتے ہوئے جان بحق appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Settlement record will remain impounded with DC Lower Chitral: PHC

Chitral Today - Mer, 18/05/2022 - 7:27pm
PESHAWAR: A division bench of Peshawar High Court (PHC), consisting of Justice Ijaz Anwar and Justice Shakeel Ahmad, on Wednesday ordered that the settlement record of Chitral will remain impounded with the deputy commissioner Lower Chitral till the decision on a petition filed in the court by the people of Chitral.

At the last hearing of the case, people of Chitral versus the federation of Pakistan and others on 17th May 2022, the advocate general Khyber Pakhtunkhwa Shumail Butt had contended that the government wanted to terminate the services of over 200 Patwaris in Chitral which it could not do in view of the stay order issued in the case and the high court should accordingly vacate the stay.
On behalf of the petitioners, it was contended by Barrister Asad-ul-Mulk that the stay order had been procured for the benefit of the 0eople of Chitral in respect of their proprietary rights and had nothing to do with retaining or terminating the services of
patwaris which was an altogether different issue.
He further stated that the retention or termination of the services of 200 patwaris was the government’s prerogative and the
advocate general was unnecessarily trying to connect two completely separate issues.
It was insisted on behalf of the petitioners that their purpose in securing the stay was to ensure that the settlement record is not handed over to the Senior Member Board of Revenue (SMBR) prior to the final
adjudication in the case.
The apprehension was that if the settlement record is moved out of Chitral then even if the petition of the people of Chitral is allowed the record would never be rectified and moving the record back to Chitral would prove to be a herculean task which will frustrate the purpose of the case, even if judicially achieved.
The division bench then ordered that the settlement record will remain impounded with the deputy commissioner Lower Chitral till the decision of the case.
The application of the petitioners for the case to be heard by a larger bench of the high court was turned down. This means that the case will continue to be heard by a division
bench consisting of two judges.

The case was adjourned to 5th July 2022.

Following the proceedings, news started to circulate on media that that services of the 200 patwaris working in Chitral had been regularized by the government.

It appears that the statement of the advocate general before the high court regarding the inability of the Government to terminate the services of 200 patwaris in view of the stay, and consequently the need to have the stay vacated was merely a ploy to have the stay vacated and the settlement record handed over to the SMBR, which request was not acceded to by the court.

The post Settlement record will remain impounded with DC Lower Chitral: PHC appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Chitral University student dies in road crash

Chitral Today - Mer, 18/05/2022 - 6:47pm
CHITRAL: A BS student of Chitral University belonging to Rayin village of Upper Chitral lost his life in a road accident on Wednesday, the university said.

“We are deeply grieved over the sad demise of Abdul Haseeb (a student of BS in T&HM in University of Chitral) in a road accident today. We pray that the Almighty Allah SWT grant him high ranks in Jannah and bestow courage on the bereaved family to bear this irreparable loss, Amen!” said the university.

Reports said Haseeb, son of retired Subedar Sharif Ahmed, was the only son of his parents. He was returning to the university from his native village on a motorcycle when he met with the tragic accident at Greenlasht near Reshun.

The post Chitral University student dies in road crash appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

آوی دوما دومی میں ائریگیشن چینل بحال کر دی گئی

Chitral Today - Mer, 18/05/2022 - 3:21pm
چترال (نمائندہ چترال ٹوڈے) گذشتہ مہینوں سے بونی ٹو شندور روڈ کی تعمیر کی وجہ سے آوی دوما دومی کے مقام پر روڈ کی کٹائی سےائریگیشن چینل مکمل طور پر ملبہ ڈالنے کی وجہ سے بند تھا۔ جس کی وجہ سے علاقے میں پانی کی شدید قلت پیدا ہوئی تھی۔

زرعی زمینات، پھلدار و غیر پھلدار پودے مکمل طور پر خشک ہو تے جار ہے تھے۔ چونکہ سینٹر فلک ناز کا دورہ اپر چترال کے موقع پر علاقہ مکیوں کا پر ُزور مطالبہ تھا کہ روڈ کی تعمیر کے دوران ائریگیشن چینل میں ملبہ ڈالنے کی وجہ سے پانی کی ترسیل مکمل طور پر بند ہوئی ہے لہذا اس کو فوری بحال کی جاے۔
اس موقع پر سینٹر فلک ناز نے ضلعی انتظامیہ اپر چترال اور این ایچ اے کے حکام بالا کو چینل کی بندش کی وجہ سے علاقے کی مجبوری اور پیدا شدہ نقصانات سے اگاہ کیا جس پر این ایچ اے نے فوری طور پرمذکورہ ائریگیشن کی بحالی کا بندوبست کیا اور گذشتہ دنوں سے پورے چینل کو مکمل صاف کر کے پانی کی ترسیل کو بحال کیا۔
علاقہ مکینوں نے سنیٹر فلک ناز کا خصوصی شکریہ ادا کیے کہ انہوں نے اس مسئلے کو ترجیحی بنیاد پر حل کرنے میں کردار ادا کیے اور ساتھ ساتھ این ایچ اے کے حکام بالا کے بھی مشکور ہو ہیں کہ انہوں نے علاقے کے مجبوری کو مد نظر رکھتے ہوئے چینل کی بحال میں فوری کام کا آغاز کر دیا۔  

The post آوی دوما دومی میں ائریگیشن چینل بحال کر دی گئی appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

حکومت اقلیتی برادری کے مسائل پر خصوصی توجہ دے رہی ہے: جوائنٹ سیکرٹری

Chitral Today - Mar, 17/05/2022 - 6:54pm

چترال (محکم الدین)  وفاقی جوائنٹ سیکرٹری مذہبی امور و بین المذاہب ہم آہنگی امجد احمدخان نے کہا ہے کہ پاکستان سب کا ہے اور یہاں رہنے والے مختلف مذاہب  کے پیروکار ایک گلدستےکی مانند ہیں جو باہمی اخوت و بھائی چارہ اور برداشت کی بدولت اس کو خوبصورت بناتے ہیں اور چترال تو ایسی جگہ ہے جہاں کے لوگ باہمی اخوت و ہم آہنگی کے حوالے سے پوری دنیا کیلئے ایک مثال ہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے منگل کے روز کالاش ویلی بریر میں چلم جوشٹ کی اختتامی تقریب کے موقع پر  کالاش مردوخواتین کے ایک بڑے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئےکیا ۔ انہوں نے کالاش قبیلے کو فیسٹول  کی مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ آپ کی خوش قسمتی ہے کہ آ پ ہی سے ایک قابل اور انتہائی باصلاحیت نوجوان  وزیر زادہ آپ کی اور پوری اقلیتی برادری کی نمایندگی اور دلو جان سے خدمت کر رہا ہے اور آپ کی ترقی کیلئے شب و روز سرگرم عمل ہے۔ انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت اقلیتی برادری کے مسائل پر خصوصی توجہ دے رہی ہے اور اس سلسلے میں کئی منصوبے رو بہ عمل ہیں۔

انہوں نے مقامی لوگوں پر زور دیا کہ وہ اس پر امن ماحول کو بر قرار رکھنے کیلئے سماج دشمن عناصر پر کڑی نگاہ رکھیں۔   

اس موقع پرمعاون خصوصی وزیرزادہ نے خطاب کرے ہوئے وفاقی حکومت کی طرف سے جوائنٹ سیکرٹری کی کالاش تہوار میں شرکت پر ان کا شکریہ آدا کیا اور کہا کہ بریر ایک پسماندہ وادی ہے بلکہ پوری کالاش وادیاں  پسماندگی کا شکار ہیں اور اس  پسماندگی کے کالاش وادیوں کے لوگ خود ذمہ دار ہیں۔ کیونکہ نمایندے منتخب کرنے کے بعد یہ اپنے نمایندوں سے پھر نہیں پوچھتے کہ وہ وادیوں کی پسماندگی دور کرنے کیلئے کیا کر رہے ہیں۔ 

وزیر زادہ نے کہا کہ چترال میں کالاش کمیونٹی کے لوگ عید پر مسلمان بھائیوں کو مبارکباد دیتے ہیں اور کالاش تہوار وں کے موقع پر مسلمان بھائی کالاش برادری کو مبارکباد دیتے ہیں جو کہ باہمی ہمدردی کی اعلی مثال ہے۔ وزیر زادہ نے کہا کہ  کالاش اقلیت کو پہلی مرتبہ  نمایندگی دی گئی  جس کی وجہ سے کالاش کمیونٹی کے بچے ڈاکٹر، انجینئر، لیکچرر اور اساتذہ بنے۔ اس پر کچھ لوگوں کا کہناہے کہ وہ ہمارے حق پر قابض ہورہے ہیں۔ ایسا بالکل بھی نہیں ہے۔ حکومت نے اقلیتوں کیلئے پانچ فیصد کوٹہ منظور کیا ہے یہ  پورے پاکستان میں کیلئے ہے۔ ان کو غلط فہمی ہے کہ ان کے ساتھ زیادتی ہو رہی ہے۔ دراصل اقلیت اپنا  کوٹہ حاصل نہیں کر پا رہے تھے۔

انہوں نے مقامی ترقیاتی منصوبوں کے حوالے سے کہا کہ بریر نالے کے آس پاس حفاظتی پشتوں کی تعمیر کیلئے ایک کروڑ روپے، بیشاڑ میں فیسٹول کی جگہ کیلئے 30 لاکھ روپے، گرو میں مسلم اور کالاش کمیونٹی دونوں کے اجتماعی استعمال کیلئے 35  لاکھ روپے زمین کی خریداری کیلئےمنظور ہو چکے ہیں۔ بیہاڑ ٹمپل کیلئے 40لاکھ، بہاڑ روڈ کیلئے 4 کروڑ منظور ہو چکے ہیں۔ بریر روڈ کی زمین کیلئے 20 کروڑمنظور ہو چکے ہیں اور بیہاڑ مکتب سکول کو پرائمری کا درجہ دیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ فوری نوعیت کے کام ہیں جن پر فیسٹول کے بعد کام شروع ہوجائے گا۔ وزیر زادہ نے وفاقی حکومت کی طرف سے کالاش کمیونٹی کی ترقی کیلئے مختلف منصوبوں پر کام کرنے کے اقدامات پروفاقی حکومت اور جوائنٹ سیکر ٹری بین المذاہب ہم آہنگی امجد احمد خان کا شکریہ  ادا کیا۔

قبل ازین  کالاش کمیونٹی بریر کی طرف سے منسٹر وزیرزادہ اور سیکرٹری امجد احمد سمیت تمام مہمانوں کو فیسٹول میں شرکت کرنےپر روایتی  چپان اور ٹوپی پہنائے گئے اور گلے میں چیاری ڈالے گئے۔

The post حکومت اقلیتی برادری کے مسائل پر خصوصی توجہ دے رہی ہے: جوائنٹ سیکرٹری appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Catch-22 situation for PML-N

Chitral Today - Mar, 17/05/2022 - 5:07pm
Col (r) Ikram Ullah Khan Amid the nail-biting aura of political uncertainty gripping the country during the past few months, Pakistan’s tottering economy is made to experience serious convulsions with economic indicators showing continuous downward trend. The ever surging inflation spiraling to a record high and the rupee taking a steep nosedive against the US dollar during the past one year or so, has put the country on the brink of default.  Currently, the country is standing at the critical juncture of its economic history and has witnessed an unprecedented economic erosion during the past few years. Economic managers of the country have continuously been experimenting with the sick economy with no symptoms of recovery in sight. At the moment, the economy finds itself on the ventilator with Miftah Ismail trying to resuscitate it after his predecessors such as Asad Umar, Dr Abdul Hafeez Sheikh and Shaukat Tareen failed to treat the chronic patient. Miftah Ismail is seen running from pillar to post trying to arrange the much-needed oxygen to keep the patient breathing though with a bleak chance of standing soon on its feet again. If at all he manages to put it on the path of recovery, it would be at a glacial speed. He is making desperate attempts to convince the oxygen supplier, i.e. IMF to do the needful to save the patient from collapse.  In such a dismal scenario, a meeting of PML-N cabinet members headed by PM Shahbaz Sharif was convened by PML-N supremo Nawaz Sharif in London. During the unusual huddle, the fragile economic situation of the country was reviewed. During three days meeting, the participants comprising cabinet members belonging to PML-N reportedly focused their deliberation mainly on the economy and discussed myriad options to take the country out of the economic morass it has sunk deep into. Various suggestions were floated that included dissolution of National Assembly and handing over of the government to a caretaker set-up and go for fresh elections without losing further time or continue with the present coalition government as desired by Zardari and other allies, take the bull by the horns, make electoral and economic reforms and take steps on war footing to put the economy back on track.  In this regard, tough and extremely unpopular decisions like raising the petroleum prices by abolishing subsidy which Khan’s government had given and the prices were frozen till next budget, are needed to be taken thus passing the economic burden on to the masses already reeling under the back-breaking inflation, that would certainly have a severe public backlash which PML-N is not ready to face alone as said by PML-N firebrand leader and federal minister for interior Rana Sanaullah. While talking to Geo NEWS programme “Naya Pakistan” he said, “PML-N has the ability to revive the economy ruined by an incompetent gang, but there is a cost for it, and PML-N is ready to pay its part of the cost but not ready to take the responsibility for everything alone. All other allies must come clear and show how much burden they were ready to shoulder for reviving the economy”.  So, PML-N has the painful realization that if subsidy is abolished, inflation will shoot up manifold and it will cost heavily on its political standing thereby badly affecting its vote bank. On the other hand, if the government decides to keep the petroleum prices frozen at the existing level, it would fail to meet the major IMF conditionality which is a must for releasing the 6 billion dollar loan as a bailout package to save Pakistan from default. So, this bleak economic scenario has created a catch-22 situation for Shahbaz Sharif’s coalition government.  Having said that, it was an epic faux pas committed by the opposition alliance (now the ruling alliance) with PML-N at the vanguard to oust Imran Khan through a vote of no-confidence. They have made him a political martyr. It would have been better for them to let him complete his tenure as his popularity graph was continuously sliding down and was destined to hit the rock bottom in due course of time due to his abysmal economic performance and bad governance. By showing him the door, PML-N and its allies have done him a great favour inadvertently. Now, Khan has succeeded in gaining unexpected public sympathy and people have forgotten the colossal economic fiasco he has brought to the country.  PML-N and its allies have lately realized that they have landed themselves in a place where they find themselves caught between the deep sea and the hard rock. However, in this tricky political game, Zardari has played his cards shrewdly leaving his perennial political rival PML-N in a cath-22 situation. He feels relaxed seeing Shahbaz Sharif in hot waters and laughs up his sleeves because he and Fazlur Rahman have nothing at stake. The way fast changing political developments are taking place, it is likely to hit PML-N very hard in the coming days and months leaving it totally spineless thus creating space for the PPP in the next general elections as Zardari will be in a comfortable position to do political wheeling and dealing – his favourite game, and would be able to carve out a suitable niche for himself and get a lion’s share in a much likely national/coalition government in the center after general elections. So, Zardari seems to have acted ingeniously to block PMl-N from getting comfortable majority in the next elections. He would never like to see his archrival forming government in the center alone for obvious reasons.  While playing this ticklish political game, both Zardari and PML-N top leadership understand well that their survival lies in keeping their common enemy away from power for which they seem prepared to make even major political compromises despite harbouring deep-seated hatred and enmity against each other; and Bilawal dropped a subtle hint at it while addressing a rally in Karachi the other day. Both PML-N and PPP leadership believe in the famous English adage,”the enemy of my enemy is my friend”. The present alliance is likely to continue even after general elections for the greater interest of both the parties.  Last but not the least, PML-N top leadership needs to tread the rocky political path full of twists and turns very cautiously as both Zardari and Fazal ur Rahman have never been losers in political bargaining throughout their political carrier. Both have the track record of bemusing their opponents quite successfully.

The post Catch-22 situation for PML-N appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Sale of pocket guides banned

Chitral Today - Mar, 17/05/2022 - 2:33pm
CHITRAL: In order to check unfair means in school and college exams, the district administration of Lower Chitral has banned the sale of pocket guides of any subjects by bookshops.

In this regard, Section 144 has been imposed in the district and in order to ensure its implementation, Additional Assistant Commissioner Shehroz Mufti visited different bookshops and seized all pocket guides. 

The seized pocket guides of all subjects, except Islamyat, were burnt while the Islamyat guides were disposed of into the river, said a statement issued by the deputy commissioner office through the social media.

The guides provide short answers to questions on which students bank without preparing for the exams and in many cases get them into the halls for cheating.

 

 

The post Sale of pocket guides banned appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Beacon of Left politics in Hindukush

Chitral Today - Lun, 16/05/2022 - 4:55pm
Mubashir Sultan Awami Workers Party, which is a left-wing socialist political party seeking to unify the working class, has formed organizing committees in the districts of Lower, Upper Chitral and Upper Dir. Baba Jan-led comrades Qazi Hakeem and Fazal Mullah paid a detailed visit to Chitral Upper and Lower. On this occasion, Anwar Wali Khan Alias Mushur was appointed as the organizer for the district of Chitral Upper. Musher was elected chairman of Buni-2 Village Council in the local government elections 2022. Comrade Mushur has long been associated with the Awami Workers Party and yesterday announced his intention to join the party formally. He also reiterated his resolve to establish a socialist school by August. In addition, Saeed and Ansar were appointed organizers for Chitral Lower and Dir Upper, respectively. AWP in the northern areas of the province has been active to a greater extent during the past few years for the release of Baba Jan from jail. Many of the enlightened youth of the north believe that politics of the left and a socialist political upfront may bring some ease to the centuries-old miseries, oppression and unequal treatment of the masses. (The writer is a Social Sciences Student at IMsciences, Peshawar).

The post Beacon of Left politics in Hindukush appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

چلم جوشٹ تہوار اپنی تمام رنگینیوں کے ساتھ اختتام پذیر

Chitral Today - Lun, 16/05/2022 - 4:46pm
چترال (محکم الدین) کالاش قبیلے کا معروف مذہبی تہوار چلم جوشٹ (جوشی) پیر کی شام اپنی تمام رنگینیوں کے ساتھ اختتام پذیر ہوا۔ تہوار کے اختتامی تقریب کے مہمان خصوصی معاون خصوصی وزیر اعلی خیبر پختونخوا وزیرزادہ تھے جبکہ کمشنر ملاکنڈ شوکت علی یوسفزئی ڈپٹی کمشنر چترال انوار الحق، کئی سرکاری آفیسران غیرملکی اور ملکی سیاحوں نے فیسٹول میں شرکت کی۔ فیسٹول کیلئے فل پروف سکیورٹی کے انتظامات کئے گئے تھے اور  باہر سے بھی  پولیس طلب کئے گئےتھے۔ فیسٹول کے آخری روز وادی بمبوریت کے تمام دیہات پہلواناندہ، انیژ، برون، بتریک اور کراکال میں حسب روایت مردو خواتین نے صبح سویرے ہی تہوار کے گیت گانے اور ڈھول بجانے کا عمل شروع کیا اور بتدریج جب تمام گاوں کےچھوٹے بڑے جمع ہو ئے تو  بڑے (چھارسو)  ڈانسنگ پلیس کی طرف ٹولیوں میں گیت گاتےناچتے اور قہقہے  لگاتے سیٹیاں بجاتے روانہ ہوئے  اور مرکزی مقام بتریک تک پہنچے۔ بترک گاوں کو کالاش قبیلے کا مذہبی اور تاریخی مقام ہونے کا اعزاز حاصل ہے  اور کالاش تاریخ کے مطابق یہ مقام کالاش حکمران راجہ وائے کا پایہ تخت رہا ہے۔  چلم جوشٹ  میں شامل کالاش  لڑکے، لڑکیاں اور مردو خواتین نے سب سے پہلے حھوٹے چھارسو میں رقص کیا اور دوپہر کو حسب روایت انتہائی شان وشوکت سے بڑے چھارسو میں داخل ہوئے۔ ڈانسنگ پلیس میں تماشئیوں اور سیاحوں کا اتنا رش تھا  کہ بیٹھنے کی جگہ کم پڑنے اور دیکھنے کی سہولت نہ ملنے کی وجہ سے  کئی سیاح جن میں فارنر بھی شامل تھے واپس چلے گئے۔ تاہم اس مرتبہ بڑی تعداد میں غیر ملکی مہمانوں نے تہوار میں شرکت کی۔  لوئر چترال انتظامیہ کی طرف سے کالاش لوگوں کیلئے ڈانسنگ پلیس کے قریب ہی  پہلی مرتبہ کھانے کا انتظام کیا گیا تھا ۔  جس پر مقامی لوگوں نے ضلعی انتظامیہ چترال کا شکریہ ادا کیا ۔ اور یہ مطالبہ کیا ۔ کہ مستقبل میں کالاش کمیونٹی کے کھانے میں مزید بہتری لائی جائے۔ فیسٹول میں پاکسانی سیاح خواتین ایک بڑ ی تعداد شریک تھی ۔ جنہوں نے کالاش لباس زیب تن کرکے فیسٹول کی خوشی کو انجوائے کیا ۔ جبکہ مرد سیاح نے روایتی پر والی چترالی ٹوپی  پہنے ہوئے تھے اور ان سیاحوں کاتعلق پاکستان کے بڑے شہروں سے تھا ۔ فیسٹول کیلئے چترال ٹریفک پولیس  کی طرف سے بہترین حکمت عملی ترتیب دینے  کے نتیجے میں اور ہر مقام پر ٹریفک ورڈن کی موجودگی کی بدولت ٹریفک روانی بلا کسی رکاوٹ کے برقرار رہی ۔ اور سیاحوں کو آنے جانے میں زیادہ مشکلا ت کا سامنا نہیں کرنا پڑا۔ فیسٹول میں یہ دیکھا گیا کہ سرکاری آفیسران کو غیر ضروری پروٹوکول دیتے ہوئےسیکیورٹی کے جوان سیاحوں کے ساتھ تیز تند رویہ اپناتے رہے جس پر کئی سیاحوں نے اس رویے کو انتہائی نامناسب قرار دیا۔ اسی طرح   فیسٹول کے دوران کالاشہ دور میوزیم بمبوریت میں یہ بڑی خامی دیکھنے میں آئی۔ کہ  اس میوزیم ایک مقامی کالاش نوجوان اکرام حسین جو فارنرز اور ملکی سیاحوں کو کالاش تاریخ و تہذیب وثقافت کے بارے میں بریفنگ دینے میں یدطولی رکھتے تھے اور سیاح اس کی بریفنگ متاثر ہوئے نہیں رہتے تھے۔  اس کی جگہ پر ایک ایسے اہکار کا تعین کیا گیا ہے جن کے پاس کالاش تہذیب و ثقافت کے بارے میں نالج نہ ہو نے کے برابر ہے ۔ اس کمی کو سیاحوں نے انتہائی طور پر  محسوس کیا۔  سیاحوں نے اس بات پر بھی افسوس کا اظہارکیا ہے ۔ کہ اتنے بڑے ایونٹ کیلئےلوگ دنیا کے کونے کونے سے آتے ہیں ۔لیکن حکومت پاکستان خصوصا صوبائی حکومت کی طرف سے سیاحوں کو سہولت دینے خاص کر سڑکوں کی حالات بہتر بنانے کیلئے اب تک کچھ  بھی نہیں کیا گیا اور نہ سیاحت کیلئے کوئی منظم منصوبہ بندی کی گئی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ غیر منظم سیاحت فروغ پارہی ہے۔  اور سیاحوں کو رہائش کیلئے کمرے نہیں مل رہے اور علاقہ ماحولیاتی آلودگی کی لپیٹ میں ہے۔ جس کیلئے منظم اقدامات کی فوری ضرورت ہے۔  کالاش قبیلے کا چلم جوشٹ تہوار ہر سال ماہ مئی کے دوسرے عشرے میں منایا جاتا ہے۔ یہ تہوار ہزاروں سالوں سے انتہائی عقیدت و احترام سے منایا جاتا ہے اور مقامی مسلمان کمیونٹی کے لوگوں کے بھر پور تعاون  سے یہ فیسٹول خوشگوار ماحول میں  انجام پاتا آرہا ہے۔  جوشی فیسٹول میں کالاش قبیلے کے تمام لوگ نئے کپڑے تیار کرتے ہیں اور مرد ٹوپی و گلے میں چیہاری ڈالتے ہیں جو کہ رن برنگی  دھاگوں سے تیار کیا جاتاہے۔تاہم مردوں کے لباس بازاروں  میں درزی تیار کرتے ہیں ۔ لیکن خواتین کا لباس بالکل منفرد ہے۔ ایک جوڑا  کم سے کم بیس دن میں تیار ہوتی ہے۔ اس لئے کالاش خواتین چھ مہینے قبل لباس کی تیاری شروع کرتی ہیں ۔ کیونکہ دس دس گز  سیاہ کپڑے کا  ایک جوڑا تیار ہوتا ہوتاہے جس پر کئی رنگوں کے دھاگوں سےکشیدہ کاری کی جاتی ہے اور  یہ لباس کالاش خواتین خصوصا لڑکیوں کے حسن کو چارچند لگا دیتی ہیں۔ حالیہ فیسٹول  کیلئے مزید جدید ڈیزائن میں  لباس تیار کئے گئے تھے ۔ اور یہ لباس بہت خوشنما لگ  رہے تھے۔ کالاش لڑکیوں نے نئے لباس پہن کر چھارسو میں چلم جوشٹ کی خوشی میں ڈھول کی تھاپ پر   رقص کرتے ہوئے نہ صرف مزہبی رسم ادا کی بلکہ نئے لباس کی نمائش کی جسےسیاحوں نے بہت سراہا ہے ۔ اور بڑے پیمانے پر ان لباس کی خریداری  بھی کی ۔  چلم جوشٹ تہوار اس مرتبہ بھی بہت جوش و خروش سے منایا گیا اور کالاش قبیلے کا یہ تہوار تین دن جاری رہنے کے بعد پیر کی شام بمبوریت میں اختتام پذیر ہوا۔

The post چلم جوشٹ تہوار اپنی تمام رنگینیوں کے ساتھ اختتام پذیر appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan

Affected people of Reshun block Mastuj road

Chitral Today - Lun, 16/05/2022 - 8:21am

[Picture: Facebook page of The People of Reshun]

RESHUN: People of Shader Reshun whose land is being used as an alternative to the Chitral-Mastuj road after its erosion by the river last year have blocked the road for non-payment of compensation.

When the road along with a large part of the scenic village was washed away by the river in the summer last year, the whole upper Chitral was cut off.

In order to restore traffic between the two districts, the local administration made an alternative road via private land destroying crops and orchards of the villagers. The owners were told that they would be paid compensation for the losses.

However, later they were handed cheques for just Rs100,000 each with the promise of full payment according to the value of the land and fruit trees and crops very soon.

Upon their protest in January this year, the district administration had given them assurance in writing that their due compensation would be cleared soon.

The affected people on Monday blocked the road after the government failed to keep its words.

They said on the one hand the river washed away private land and houses and on the other many more people were made to suffer by diverting the road through their land and even courtyards of houses permanently.

They said the protest would continue till payment of full compensation to the affected people.

 

 

The post Affected people of Reshun block Mastuj road appeared first on Chitral Today.

Categorie: Pakistan